سندھ اسمبلی میں قائد حزب اختلاف حلیم عادل شیخ کے خلاف اقدام قتل اور آغوا کا مقدمہ درج مقدمے کے اندراج کے بعد پولیس نے ملزمان کی گرفتاری کے لیے چھاپے مارنے شروع کر دیے
ZANJANI NEWS

کراچی(زنجانی نیوز) پولیس نے سندھ اسمبلی میں قائد حزب اختلاف حلیم عادل شیخ اور ان کے 70 ساتھیوں کے خلاف سرکاری کام میں مداخلت ، پتھراﺅ اور توڑ پھوڑ ، اقدام قتل ، اسلحہ کے زور پر اغوا مالی نقصان ، سرکاری ملازمین پر حملے سمیت دیگر دفعات کے تحت مقدمہ درج کیا ہے۔کراچی کے میمن گوٹھ پولیس اسٹیشن میں تحریک انصاف کے رہنما اور سندھ اسمبلی میں قائد حزب اختلاف حلیم عادل شیخ سمیت ان کے 60 سے 70 ساتھیوں کے خلاف سرکاری کام میں مداخلت ، پتھراﺅ اور توڑ پھوڑ ، اقدام قتل ، اسلحہ کے زور پر اغوا مالی نقصان ، سرکاری ملازمین پر حملے سمیت دیگر دفعات کے تحت مقدمہ درج کر لیا۔ پولیس نے ہفتے کی شب کورنگی کے رہائشی ٹھیکیدار محمد ایوب کی مدعیت میں حلیم عادل شیخ اور ان کے ساتھیوں کے خلاف جرم دفعات 147 ، 148 ، 149 ، 186 ، 353 ، 324 ، 417 ، 504 اور 506B کے تحت مقدمہ الزام نمبر 34/2021 درج کیا ہے۔مدعی نے اپنے بیان میں پولیس کو بتایا ہے کہ ڈپٹی کمشنر ضلع ملیر کے3 جنوری 2021 کو جاری کیے جانے والے نوٹی فکیشن پر عمل درآمد کے لیے سولنگی اسٹاپ کے قریب تجاوزات ہٹانے کا کام شروع کیا تو درمیان حلیم عادل شیخ اپنے دیگر 60 سے 70 کارکنوں کے ہمراہ آئے جو مسلح تھے۔ انہوں نے ہیوی مشینری پر پتھراﺅ کیا ، شاول کے شیشے توڑے اور کارسرکار میں مداخلت کرتے ہوئے ملازمین پر حملہ آور ہوگئے، اس دوران پولیس افسران و ملازمین کی وردیاں پھاڑ دیں اور ان پر ڈنڈے لاٹھیاں پرسائیں۔ حملہ آوروں نے ملازمین اور مزدوروں کو اسلحہ کے زور پر اپنے ساتھ لے جانے کی بھی کوشش کی۔ واقعے کا مقدمہ درج کرائے جانے کے بعد انویسٹی گیشن پولیس نے ملزمان کی گرفتاری کے لیے چھاپے مارنے شروع کر دیے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *